Conversations

“English will stay as the language of power”

August 23, 2015

Mazhar Khan Jadoon — The choice between English and Urdu has left our society divided and governments confused on the linguistic front, often triggering public debates and some cosmetic measures too by successive governments. Though the 1973 Constitution declares that the national language of Pakistan is Urdu, and arrangements shall be made for its being used for official and other purposes within fifteen years, our rulers and policy makers find it hard to implement. Why? Is it the state which is doing nothing to introduce Urdu as the official language in power corridors, or is it our ruling elite that is guarding English against all odds? Class inequality and social conflicts are the ultimate outcomes of different education systems — English medium for the elite, Urdu medium for the middle and lower middle classes and Madaris with Arabic for the left-out segments of society. Why has the state failed to stem this class inequality? And then there is a struggle by smaller groups to keep their ethnic and regional identities and languages alive. The News on Sunday sat with renowned linguist and intellectual Dr Tariq Rahman last week to seek his help in understanding the underlying factors keeping this lingual ۔۔۔

The man behind Lahore Arts Forum

July 24, 2015

Jamil Naqi — Muzaffar Ghaffar is the President of the Lahore Arts Forum (LEAF) known to be the most active cultural organization in Pakistan (in its 17th year). LEAF provides an enclave where folks come to nurture their soulful aspects. It is a place where poetry, literature, ‘kaafi’ can be enjoyed and the dream of a gentler world remains ۔۔۔

The phenomenal woman

June 19, 2015

Harris Khalique — It is only us – the poets and writers of Pakistan – who have never let down the oppressed and the condemned in our society. We have kept alive the struggle for individual liberties and realisation of human rights of common people,” proudly claims Kishwar Naheed — the arch feminist poet of our times. Kishwar Apa – as she is fondly called by the young and the old alike – celebrates her 75th birthday this year. In the artistic and literary circles as well as among political workers, trade unionists, journalists and diplomats in Islamabad, she is considered the matriarch of culture and resistance. With eight collections of verse, a pungent collection of personal memoirs, pen portraits of writers and artists, and translations of some key feminist literary texts from other languages into Urdu behind her, Naheed is more prolific than most of her contemporaries. Besides, she writes a regular weekly newspaper column and is widely acclaimed for her sharp and incisive poetic expression, for being bold and direct, and, for celebrating the universal human struggle for equality, justice and freedom. She champions the cause of peace in South Asia and has played a significant role in ۔۔۔

Urdu was a neglected language, damned as ‘foreign’ or ‘Pakistani’: Urdu writer Shamsur Rahman Faruqi

May 21, 2015

Trisha Gupta — Shamsur Rahman Faruqi is among modern Urdu’s most renowned voices, both as a critic and as a fiction writer. His critical ouevre includes a pathbreaking four-volume study of the poet Mir Taqi Mir, and another influential four-volume work on Urdu’s rambunctious romance epic, the Dastan-e-Amir Hamza. His fiction is also highly acclaimed, and he is somewhat unique in having been his own translator into English. He speaks on how he began writing, moving from fiction to criticism, translating from Urdu to English, and his experience of the Urdu and English literary ۔۔۔

نیلم احمد بشیر کا خصوصی انٹرویو

May 7, 2015

کوکب کاظمی — نیلم احمدبشیر دنیائے شعروادب کاسرمایا ہیں۔انہوں نے ادبی گھرانے میں آنکھ کھولی ۔ ان کے والداحمد بشیر پاکستا ن کے نامورادیب اوراصول پسندصحافی ہونے کے ساتھ ساتھ ادبی حلقوں کی ہردلعزیز شخصیت بھی تھے۔ویسے توایک عورت ہونے کے ناطے نیلم کی کہانیوں کاموضوع عورت ہی ہے۔لیکن انہوں نے پاکستان کے علاوہ جن جن ملکوں میں وقت گزاراوہاں کے پسماندہ طبقے کے لوگوں کو بھی اپنی کہانیوں کا موضوع بنایا ہے۔شاعری اورافسانہ نگاری کے ساتھ ساتھ انہوں نے سفر نامے مضامین اورشخصی خاکے بھی تحریر کیے ہیں ۔اس وقت ان کی تحریروں کے تراجم یونیور سٹی آف ورجینیا نارتھ کیرولائنا برکلے اورٹورنٹو کی بھی بعض یونیورسٹیز میں پڑھائے جارہے ہیں ۔۔۔

Interview with famous Pakistani playwright Shahid Nadeem

May 2, 2015

Riyaz Wani — Your play Dara on the Sufi crown prince Dara Shikoh, the eldest son of fifth Mughal emperor Shah Jahan, has been staged at the National Theatre in London. Tell us about the response it got. Dara at the National Theatre has been a smashing success both with the critics and the audience. The play got an overwhelming media coverage with excellent reviews in The Telegraph, The Independent, The Guardian, The Express, The Mail, The Observer, Times and also on BBC Radio and TV and Channel 4 as well as theatre magazines. There was also good coverage in Pakistan- and India-based papers. The shows were sold out from the opening in January 2015 through to the last shows in early ۔۔۔

اداکارہ، فلمساز، ہدایتکار، شاعر ادیب نعیم ہاشمی کی 39ویں برسی منائی گئی

April 28, 2015

نوائے وقت — معروف اداکار، فلمساز، ہدایتکار، شاعر اور ادیب نعیم ہاشمی کی 39ویں برسی منائی گئی، ان کے صاحبزادے خاور نعیم ہاشمی نے قرآن خوانی کا اہتمام کیا، جس میں اداکار مصطفیٰ قریشی، ناصر نقوی، شجاعت ہاشمی، نیر اعجاز، ہدایت کار، حسن عسکری، جاوید رضا، کلچرل ایسوسی ایشن کے چیئرمین سہیل بخاری، اداکارہ نشو بیگم، حافظ غلام محی الدین اور اخبار نویسوں کی بہت بڑی تعداد نے شرکت ۔۔۔

ہراچھا شعرمیر کا، طلعت حسین سے باتیں ادب کی

April 19, 2015

اقبال خورشید — ہمارے ہاں زندگی کے مختلف شعبوں میں ایسی شخصیات کی کمی نہیں جو شعروادب سے گہرا شغف رکھتی ہیں۔ ’’میں اور ادب‘‘ کے زیرعنوان اس سلسلے میں ایسی ہی شخصیات سے شعروادب کے موضوع پر ہونے والا مکالمہ شامل کیا جائے گا جو نثراور سخن سے کے شعبے سے متعلق نہیں، مگر یہ ان کی زندگی کی ایک اہم مشغولیت ۔۔۔

علامہ اقبال سے منیب اقبال تک علامہ کے پوتے منیب اقبال کی باتیں

April 19, 2015

ناصر زیدی — س: پاکستان بننے کے بعد اب67سال سے زائد عرصہ ہو چکا ہے اور علامہ کا یوم وصال اور یوم پیدائش 1938ء کے بعد سے منایا جا رہا ہے مگر اب بھی نوجوان نسل میں ان کے اشعار غلط سلط پڑھے جاتے ہیں، غلط لکھے جاتے ہیں، اس کا کیا ہو؟ کیسے یہ ٹھیک ہو سکتا ہے؟ ج :یہ ایک عجیب سی بات ہے اس کو مَیں افسوس ناک بھی کہوں گا اور انٹرنیٹ پر دیکھیں تو متعدد ایسے اشعار ہیں، جن کا کوئی سر پیر نہیں ہوتا، کوئی وزن نہیں ہوتا۔ ان کے ساتھ علامہ کی تصویر لگی ہوتی ہے اور نیچے لکھا ہوتا ہے کہ یہ علامہ اقبال ؒ کے اشعار ہیں اور لوگ ان کو بے حد پسند کرتے ہیں۔ اس سے یہ صاف ظاہر ہوتا ہے کہ لوگوں کو نہ تو علامہ اقبال ؒ کا پتہ ہے اور نہ ہی ان کے اشعار کا۔ اس کے تدارک کے لئے ہم کوشش کر رہے ہیں۔ میرے ایک عزیز دوست ہیں انہوں نے علامہ اقبال ؒ کا پیج بنایا ہوا ہے، فیس بُک پر، جس کو اتفاق کہیں وہ پاکستان میں سب سے زیادہ مقبول پیج ہے۔ علامہ اقبال ؒ صاحب کے نام سے جن کے ۔۔۔

علامہ اقبال سے منیب اقبال تک علامہ کے پوتے منیب اقبال کی باتیں

April 18, 2015

ناصر زیدی — س:مغربی ممالک میں کبھی اقبالؒ کے حوالے سے تعارف ہوا کہ آپ اُن کے پوتے ہیں؟ ج:جی ہر جگہ پر مجھے خود حیرانی ہوتی تھی کہ جب میں اپنا نام بتاتا تھا تو اکثر لوگ مجھ سے پوچھتے تھے، علامہ سے نسبت کے حوالے سے۔ منیب اقبال میرا نام ہے تو میرا نام پورا سن کر بڑی بڑی عجیب عجیب جگہوں پر، مجھے اچھی طرح یاد ہے ایک مرتبہ رات کے وقت ایک دکان میں گیا، کافی لیٹ، تو جو دکاندار تھا اس نے مجھ سے کسی بات پر گفتگو شروع کر دی۔ اُردو زبان میں اس نے مجھ سے پوچھا کہ کہاں سے آئے ہو ؟میں نے کہا پاکستان سے اُس نے پوچھا آپ کا کیا نام ہے تو میں نے اپنا نام بتایا، یہ کوئی رات کے 2 یا 3 بجے کا وقت ہوگا تو ان صاحب نے کہا اچھا Are you related to Allama Iqbal پاکستان کے شاعر جو ہیں۔ آپ ان کے رشتہ دار ہیں ۔میں بہت حیران ہوا کہ آپ کو کیسے پتہ ہے تو انہوں نے کہا کہ میں ایک اسکالر ہوں اور پی ایچ ڈی کر رہا ہوں اور یہاں پر رات کو پارٹ ٹائم نوکری کر رہا ہوں پیسے ۔۔۔